آنچ

وکی لغت سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

آنْچ {آنْچ (ن مغنونہ)} (سنسکرت)

اکشِرس آنْچ سنسکرت میں اصل لفظ اکشِرس ہے اس سے ماخوذ اردو زبان میں آنچ مستعمل ہے۔ سب سے پہلے 1665ء میں "پھول بن" میں مستعمل ملتا ہے۔

اسم نکرہ (مذکر، مؤنث - واحد)

جمع: آنْچیں {آں + چیں (یائے مجہول)}

جمع غیر ندائی: آنْچوں {آں + چوں (واؤ مجہول)}


معانی[ترمیم]

{ اصلا } لپٹ، شعلہ۔

؎ سوز غم دے گیا کون سا رشک

گل یہ ہوا عشق کی کس چمن میں لگی

آنچ دِل سے اٹھی تو جگر تک گئی منہ سے نکلا دھواں آگ تن میں لگی [1]

2. تپش، گرمی، حدت، حرارت۔

؎ سحر کی تازہ دمی، چڑھتی دھوپ کی گرمی

تری نگاہ کی ٹھنڈک ترے شباب کی آنچ [2]

3. { اصلا } آگ، آتش۔

"انگیٹھی کی آنچ کم کر کے کھچڑی کو دم کرنے میز پر رکھ دیا۔" [3]

4. سخت ضرر رساں چیز پاس سے گزر جانے کی صورت حال (جس سے آدمی اس طرح دور ہٹے جیسے آگ کی حدت سے)، قرب، پرتو، سایہ، عکس، جھلک۔ (بیشتر تلوار کے ساتھ مستعمل)۔

؎ شاق ہے دل پہ غم ابروے خمدار کی آنچ

سچ کہا ہے کہ بری ہوتی ہے تلوار کی آنچ [4]

5. { مجازا } مصیبت، آفت، بلا۔

"ہم غریبوں کو زبردستی اپنی آنچ میں کیوں دھکیلتے ہو۔" [5]

6. { فطری تقاضا - مجازا } خواہش نفسانی یا شہوت کی شدت (خصوصاً پیڑو کے ساتھ مستعمل)۔

؎ اونکے پیڑو کی آنچ کو شاباش

اک نئے دھگڑے کی ہے روز تلاش [6]

بھوک کی شدت۔

"بھوک کی آنچ سے میں نے بھی اپنے پریم کی چتا پھونک دی۔" [7]

7. { مجازا } مادی یا پدری محبت کا جوش، مامتا (بیشتر اولاد یا کوکھ وغیرہ کے ساتھ)۔

؎ کانٹے زبانوں کے مرے دِل میں کھٹکتے ہیں

کیا آتما کی آنچ سے شعلے بھڑکتے ہیں [8]

8. { مجازا } تاؤ، جوش۔

؎ نشہ ازل کا آج سوا ہوا تو لطف ہے

دو تین آنچ کی جو عطا ہو تو لطف ہے [9]

9. نقصان، ضرر، صدمہ۔ (امیراللغات، 185:1)

10. { مجازا } سوز عشق، سوزش فراق۔

؎ آنچ میں ڈالا گیا

تیرا دلِ با وفا [10]

مترادفات[ترمیم]

مَمْتا گَرْمی حِدَّت دھار سینْک ضَرْب شُعْلَہ

روزمرہ جات[ترمیم]

آنچ پہنچنا

اگر خدانخواستہ پل کو کچھ بھی آنچ پہنچی تو فوجوں کی نقل و حرکت اور رسد کی آمد و رفت بالکل موقوف ہو جائے گی۔" [11]

آنچ دینا

آگ پر گرم کرنا، تاو دینا۔ ؎ کسوٹی پہ کستے ہیں دیتے ہیں آنچ

ہر اک چاشنی کی مقرر ہے جانچ [12]

آنچ کرنا

آگ سلگانا، آگ روشن کرنا۔ (امیراللغات، 182:1، نوراللغات، 145:1)

آگ جلائے رکھنا، آگ دکھاتے رہنا۔

کڑھاءو گھی سے بھر کر چولھے پر دھرواءو اور سات رات دن اس کے نیچے آنچ کرو تاکہ خوب کڑکڑائے۔" [13]

آنچ کھانا

آگ پر جوش میں آنا، خوب پکنا۔

؎ خود کو جلا کے خاک کر کشتہ مس جو بن سکے

بوتہ اگر وفا کا ہے آنچ پہ آنچ کھائے جا [14]

ضرورت سے زیادہ پک جانا۔

یہ حلوا سہن ذرا آنچ آنچ کھا گیا ہے" [15]

تپایا جانا۔

تلوار اگرچہ لوہا ہے پر بڑی آنچ کھا کر تیار ہوتی ہے۔" [16]

آنچ لگانا

آگ دکھانا، آگ سے جلانا، آگ کو مشتعل کرنا۔

؎ چراغ حسن ازل نے دامان دل کو آنچ ایسی کچھ لگا دی

کہ ہربن موے تن سے شعلے برابر اب تک نکل رہے ہیں [17]

آنچ نہ آنے دینا

الزام سے بچانا، (جسمانی یا روحانی) صدمے سے محفوظ رکھنا۔

میں حتی الامکان آپ پر آنچ نہ آنے دوں گا مگر آپ کو حق و انصاف کی حمایت کرنے پر کچھ نقصان برداشت کرنے کے لیے تیار رہنا چاہیے۔" [18]

آنچ اٹھانا

کسی مضرت رساں چیز کے قرب یا اثر کو برداشت کرنا۔

تلوار اگرچہ لوہا ہے پر بڑی آنچ کھا کر تیار ہوتی ہے تو دشمن بھی اس کی آنچ نہیں اٹھا سکتا۔" [19]

آنچ آنا

آگ کی تپش یا حدت جسم کو لگنا، جلنا۔

؎ امت تری دوزخ میں مگر جا نہیں سکتی

دلسوز محمد پہ تو آنچ آ نہیں سکتی [20]

ضرر پہنچنا، نقصان ہونا۔

جب کبھی اردو پر آنچ آتی دیکھی تو وہ ..... فوراً کمربستہ ہو گئے۔" [21]

(جسمانی یا روحانی) صدمہ پہنچنا، چوٹ پھینٹ لگنا۔

پیغمبر صاحب کی حفاظت سے مونہ نہ موڑا اور آپ کے جسم شریف پر آنچ نہ آنے دی۔" [22]

الزام آنا، حرف آنا، دھبا لگنا۔

پہلے بات کو اچھی طرح جانچ لیتی تھی کہ اپنے اوپر آنچ نہ آنے پائے پھر منہ سے نکالتی تھی۔" [23]


رومن[ترمیم]

aanch

تراجم[ترمیم]

انگریزی: Flame; fire; blaze; heat; warmth; fervour; loss; grief

حوالہ جات[ترمیم]

     1  ^ ( 1951ء، آرزو، ساز حیات، 30 )
     2  ^ ( 1959ء، گل نغمہ، فراق، 156 )
     3  ^ ( 1935ء، خانم، 200 )
     4  ^ ( 1900ء، دیوان حبیب، 76 )
     5  ^ ( 1888ء، ابن الوقت، 103 )
     6  ^ ( 1873ء، کلیات منیر، 593:3 )
     7  ^ ( 1956ء رادھا اورنگ محل، 32 )
     8  ^ ( 1912ء، شمیم، مرثیہ، 30 )
     9  ^ ( 1901ء، مرثیہ سلیم (مولوی اولاد حسن)، 7 )
     10  ^ ( 1927ء، سریلے بول، 69 )
     11  ^ ( 1857ء، گرفتار شدہ خطوط، غدر دہلی کے افسانے، 136:5 )
     12  ^ ( 1911ء، کلیات اسماعیل، 107 )
     13  ^ ( 1802ء، آرائش محفل، حیدری، 84 )
     14  ^ ( 1942ء، سنگ و خشت، 6 )
     15  ^ ( 1895ء، فرہنگ آصفیہ، 243:1 )
     16  ^ ( 1824ء، سیر عشرت، 45 )
     17  ^ ( 1919ء، کیفی، کیف سخن، 65 )
     18  ^ ( 1922ء، گوشہ عافیت، 283:1 )
     19  ^ ( 1824ء، سیر عشرت، 45 )
     20  ^ ( 1962ء، مراءی نسیم، 17:3 )
     21  ^ ( 1935ء، چند ہمعصر، 257 )
     22  ^ ( 1907ء، اجتہاد، 136 )
     23  ^ ( 1930ء، حیات صالحہ، 36 )
‘‘http://ur.wiktionary.org/w/index.php?title=آنچ&oldid=26579’’ مستعادہ منجانب