آزردہ خاطر

ویکی لغت سے
Jump to navigation Jump to search

آزُرْدَہ خاطِر {آ + زُر + دَہ + خا + طِر}

فارسی زبان میں مصدر آزردن سے مشتق صیغہ حالیہ تمام آزردہ کے ساتھ عربی اسم خاطر لگنے سے مرکب بنا۔ اردو میں بطور اسم صفت مستعمل ہے۔ 1802ء میں "خرد افروز" میں مستعمل ملتا ہے۔

صفت ذاتی

جمع غیر ندائی: آزُردَہ خاطِروں {آ + زُر + دَہ + خا + طِروں (و مجہول)}

معانی[ترمیم]

رنجیدہ، غمگین، ملول، مایوس؛ ناراض۔

؎ فغاں ہے شیوۂ آزردہ خاطراں اے دل

اثر نہیں نہ سہی چپ تری زباں کیوں ہو [1]

انگریزی ترجمہ[ترمیم]

grieved in heart, troubled in mind; sad, dejected; offended, vexed, displeased; dissatisfied; disgusted

مترادفات[ترمیم]

ناراض ناخُوش خَفا

حوالہ جات[ترمیم]

  1     ^ ( ترانہ وحشت، 1950ء، 218 )