آزمائش

ویکی لغت سے
Jump to navigation Jump to search

آزْمائِش {آز + ما + اِش} (فارسی)

آزْمُودَن آزْمائِش

فارسی مصدرآزْمُودَن سے حاصل مصدر آزمائِش ہے۔ اردو میں بطور اسم یا حاصل مصدر مستعمل ہے۔ سب سے پہلے 1649ء میں "خاور نامہ" میں مستعمل ملتا ہے۔

اسم کیفیت (مؤنث - واحد)

جمع: آزْمائِشیں {آز + ما + اِشیں (ی مجہول)}

جمع ندائی: آزْمائِشو {آز + ما + اِشو (و مجہول)}

جمع غیر ندائی: آزْمائِشوں

{آز + ما + اِشوں (و مجہول)}


معانی[ترمیم]

امتحان، جانچ، پرکھ، وہ فعل جو تجربہ کرنے کے لیے ہو۔

"ان آزمائشوں (Tests) سے مدد ملے گی جو گزشتہ سالوں میں ماہرین فن نے ترتیب دی ہیں۔" [1]

انگریزی ترجمہ[ترمیم]

Trial, test, proof, essay, examination; experiment

مترادفات[ترمیم]

جانْچ اِبْتِلا پَرْچَہ تَجْرِبَہ اِحْتِساب نَقْد

روزمرہ جات[ترمیم]

آزمائش میں آنا

جانچا جانا، پرکھا جانا، تجربے یا امتحان کے بعد معلوم ہونا۔

؎ یہاں تک گردش طالع تو آئی آزمائش میں

خط تقدیر بھی میری جبیں پر نقش باطل ہے [2]

آزمائش میں ٹھہرنا

امتحان میں پورا اترنا۔

؎ آزمائش میں ٹھہرنے کا سہارا ہو گیا

تیر قاتل کا ظفر تکیہ ہمارا ہو گیا [3]

رومن[ترمیم]

Aazmaish

تراجم[ترمیم]

انگریزی : Trial; test; experiment; assay; examination

حوالہ جات[ترمیم]

    1   ^ ( 1935ء، اصول تعلیم، 146 )
    2   ^ ( 1772ء، فغاں، انتخاب، 137 )
    3   ^ ( 1836ء، ریاض البحر، 24 )