آزمانا

ویکی لغت سے
Jump to navigation Jump to search

آزْمانا {آز + ما + نا} (فارسی)

آزمودن آزْمانا

فارسی مصدر آزمودن سے اسم فاعل آزما مشتق ہے۔ اردو میں بطور لاحقۂ فاعلی اور صیغہ امر مستعمل ہے، آزما کے ساتھ نا بطور لاحقۂ مصدر لگانے سے آزمانا بنا۔ اردو میں بطور مصدر مستعمل ہے۔ اردو میں سب سے پہلے 1649ء میں "خاور نامہ" میں مستعمل ملتا ہے۔ متغیّرات

آزْماوْنا {آز + ماؤ + نا}

فعل متعدی

معانی[ترمیم]

1.جانچنا، پرکھنا، امتحان کرنا۔

"ابراہیم کو ان کے پروردگار نے چند باتوں میں آزمایا۔" [1]

فعل کی حالتیں

آزْمانا {آز + ما +نا}، آزْمانے {آز + ما +نے} ،

آزْمانی {آز + ما +نی}، آزْماتا {آز + ما +تا} ،

آزْماتے {آز + ما +تے}، آزْماتی {آز + ما +تی} ،

آزْماتِیں {آز + ما +تِیں}، آزْمایا {آز + ما +یا} ،

آزْمائے {آز + ما +ۓ}، آزْمائی {آز + ما +ئی} ،

آزْمائِیں {آز + ما +ئِیں}، آزْمایا {آز + ما +یا} ،

آزْمائے {آز + ما +ۓ}، آزْمائیں {آز + ما +ئیں(ی مجہول)} ،

آزْماؤُں {آز + ما +ؤُں}، آزْما {آز + ما} ،

آزْماؤ {آز + ما +ؤ(و مجہول)}، آزْمائِیو {آز + ما +ئِیو(و مجہول)} ،

آزْمائِیے {آز + ما +ئِیے}

مترادفات[ترمیم]

جانْچْنا

رومن[ترمیم]

Aazmana

تراجم[ترمیم]

انگریزی : To put to test; to scrutinize; to try; to make experiments

حوالہ جات[ترمیم]

     1  ^ ( 1649ء، خاور نامہ، 272 )