یار

ویکی لغت سے
Jump to navigation Jump to search

یار {یار} (فارسی)

اسم نکرہ (مذکر)

جنسِ مخالف: سَہیلی {سَہے + لی}

جمع غیر ندائی: یاروں {یا + روں (و مجہول)}

معانی[ترمیم]

1. مددگار، معاون، ساتھی، حمایتی، دستگیر، یاری وغیرہ، مجھ، سہائی، حامی، ساتھ دینے والا، سہایتا کرنے والا۔

؎ جان تنہا بدن کو پھوڑ گئی

کون دنیا میں ہے کس کا یار، [1]

2. دوست، آشنا، متر، ہمدم، رفیق، محب، مخلص، غم خوار۔

؎ رنگ اہل جہان کا یہ ہے

کل ہی دشمن ہے جو کہ یار ہے آج، [2]

3. معشوق، محبوب، پیارا، من برن، من مومن، دلربا، پریتم، دلبر، صنم۔

؎ یار سے چھیڑ چلی جائے اسد

گر نہیں وصل تو حسرت ہی سہی، [3]

4. دھکڑ، دھکڑا، لگواڑ، آشنا۔

5. بجائے خود، آپ اپنا، میں، ہم۔

6. خدا تعالٰی کی طرف اشارہ، رب، خدا، اللہ، بھگوان، رام۔

مترادفات[ترمیم]

خَلِیل، ظَہِیر، مُخْلِص، دوسْت، آشْنا، رَفِیق،

مرکبات[ترمیم]

یار باز، یار باش، یار باشی، یارِ شاطِر، یارِ غار، یار فَروش، یار فَروشی

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ( مجروح )
  2. ( مجروح )
  3. ( غالب )

فارسی[ترمیم]

اسم[ترمیم]

یار (جمع: یاران)

  1. یار