ٹھگنا

ویکی لغت سے
Jump to navigation Jump to search

ٹھَگْنا {ٹھَگ + نا} (سنسکرت)

ستھگہ، ٹھگ، ٹھَگْنا

سنسکرت کے اصل لفظ ستھگہ سے ماخوذ اردو زبان میں ٹھگ مستعمل ہے اس کے ساتھ اردو لاحقہ مصدر نا لگنے سے ٹھگنا بنا اردو میں بطور مصدر مستعمل ہے۔ 1635ء میں "سب رس" میں مستعمل ملتا ہے۔

فعل متعدی

معانی[ترمیم]

1. لوٹنا، فریب دینا، دغا کرنا، فریب دے کر چھین لینا۔

"بچہ شیطان بن کر میرے ایمان کو ٹھگنے آیا ہے" [1]

فعل کی حالتیں

ٹھَگْنا {ٹھَگ +نا}ٹھَگْنے {ٹھَگ +نے} ،

ٹھَگْنی {ٹھَگ +نی}ٹھَگْتا {ٹھَگ +تا} ،

ٹھَگْتے {ٹھَگ +تے}ٹھَگْتی {ٹھَگ +تی} ،

ٹھَگْتِیں {ٹھَگ +تِیں}ٹھَگا {ٹھَگا} ،

ٹھَگے {ٹھَگے}ٹھَگی {ٹھَگی} ،

ٹھَگِیں {ٹھَگِیں}ٹھَگا {ٹھَگا} ،

ٹھَگے {ٹھَگے}ٹھَگیں {ٹھَگیں(یائے مجہول)} ،

ٹھَگُوں {ٹھَگُوں}ٹھَگ {ٹھَگ} ،

ٹھَگو {ٹھَگو(واؤ مجہول)}ٹھَگْیو {ٹھَگ+یو(واؤ مجہول)} ،

ٹھَگْیے {ٹھَگ+یے}

انگریزی ترجمہ[ترمیم]

to cheat, deceive, beguile, impose on, delude, circumvent, trick, dupe; to rob

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ( 1909ء، خوبصورت بلا، 34 )