حاضری

ویکی لغت سے
Jump to navigation Jump to search

حاضِری {حا + ضِری} (عربی)

ح ض ر، حاضِر، حاضِری

عربی زبان سے ماخوذ اسم حاضر کے ساتھ ی بطور لاحقۂ کیفیت لگانے سے حاضری بنا۔ اردو میں بطور اسم مستعمل ہے۔ 1921ء کو اکبر کے "کلیات" میں مستعمل ملتا ہے۔

اسم نکرہ (مؤنث - واحد)

جمع: حاضِرِیاں {حا + ضِرِیاں}

جمع غیر ندائی: حاضِرِیوں {حا + ضِرِیوں (واؤ مجہول)}

معانی[ترمیم]

1. حاضر ہونے کا عمل یا کیفیت، موجودگی، پیشی۔

"یہ اس کے دفتر میں میری آخری حاضری تھی۔"، [1]

2. وہ کھانا جو دن میں پہلی مرتبہ کھایا جائے، ناشتا۔

"ایسا بے فکر آدمی میں نے نہیں دیکھا نہ حاضری کا خیال نہ ڈنر کا"، [2]

3. وہ کھانا جو بعد دفن میت مرنے والے کے گھر بھیجا جاتا ہے۔

"غمی میں حاضری، پھول، دسواں بیسواں وغیرہ یہ سب کچھ اس کے ہاں ہوتا ہے۔"، [3]

4. وہ نقد روپیہ جو میت والے کو دیا جائے۔

(فرہنگ آصفیہ)

5. حضرت عباس یا شہدائے کربلا کی نذر کا کھانا جو عموماً محرم کی آٹھویں کو کھلایا جاتا ہے۔

"غفران منزل میں محرم بڑے زور و شور سے منایا جاتا تھا اور ساتویں تاریخ کی مہندی آٹھویں کی حاضری....کرتی تھی۔"، [4]

انگریزی ترجمہ[ترمیم]

presence, attendance, appearance (in a court); levee, audience; an offering of food to a saint or to a departed spirit; a funeral feast (sent to the household of the deceased); breakfast (of Europeans)

مترادفات[ترمیم]

مَوجُودَگی، ناشْتا، شُہُود، رُجُوع، شُہُود،

مرکبات[ترمیم]

حاضِری کا رَجِسْٹَر، حاضِری کا کھانا، حاضِری بَنْد

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ( 1982ء، میرے لوگ زندہ رہیں گے، 86 )
  2. ( 1936ء، پریم چند، پریم چالیسی، 23:2 )
  3. ( 1923ء، احیاء ملت، 54 )
  4. ( 1952ء، میرے بھی صنم خانے، 372 )

مزید دیکھیں[ترمیم]